The New curriculum in Saudi Arabia also Teach about Ramayana and Mahabharat

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک/این این آئی)سعودی عرب کے نئے تعلیمی نصاب میں رامائن اور مہا بھارت کے بارے میں بھی پڑھایا جائے گا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق سعودی نصاب میں رامائن اور مہابھارت کی شروعات کے علاوہ نئے وژن 2030 ء میں انگریزی زبان کو لازمی قرار دیا گیا ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق سعودی شہری نائف المرواعی نے ایک امتحان کے پرچے کا اسکرین شاٹ شیئر کیا۔ انہوں نے لکھاکہ سعودی عرب کا نیا وژن 2030 اور نصاب ایک ایسا مستقبل بنانے میں مددگار ہوگا جو جامع، آزاد خیال اور روادار ہو،سماجی علوم کی کتاب میں آج میرے بیٹے کے اسکول کے امتحان کے اسکرین شاٹ میں ہندو مذہب، بدھ مت، رامائن، کرما، مہابھارت اور دھرم کے تصورات اور تاریخ بھی شامل ہیں۔ مجھے اس کے مطالعے میں مدد کرنے میں مزا آیا۔

دوسری جانب سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے واضح کیا ہے کہ مملکت میں انکم ٹیکس متعارف کرانے کاکوئی منصوبہ زیر غور نہیں۔وہ ایک مقامی سعودی ٹی وی کو انٹرویو دے رہے تھے۔ انھوں نے اس انٹرویو میں سعودی عرب کے ویژن 2030 کے بارے میں تفصیل سے اظہارخیال کیا۔ سعودی معیشت کو متنوع بنانے کے لیے اس منصوبہ کو پانچ سال مکمل ہوچکے ہیں۔انھوں نے کہا کہ وہ سعودی عرب میں اضافی قدری ٹیکس(ڈبلیو اے ٹی)کی شرح میں بتدریج کمی کا ارادہ رکھتے ہیں۔انھوں نے بتایا کہ ویلیو ایڈڈ ٹیکس کا نفاذ ان کے لیے ذاتی طور پر ایک تکلیف دہ فیصلہ تھا کیونکہ میں کسی سعودی شہری کوکسی بھی طرح تکلیف میں مبتلا نہیں کرنا چاہتا تھا بلکہ میرا کام تو یہ ہے کہ میں انھیں طویل المیعاد مستقبل یا آئندہ بیس سے تیس سال کے لیے ضمانت دوں۔شہزادہ محمد بن سلمان نے کہا کہ ہم سعودی عرب میں موجود ہر چیز سے فائدہ اٹھانا چاہتے ہیں۔خواہ یہ تیل کا شعبہ ہے یا کوئی اوروسائل ہیں۔انھوں نے بتایا کہ اس سال پبلک انویسٹمنٹ فنڈ سعودی عرب میں مختلف منصوبوں پر 160 ارب ڈالر صرف کرے گا۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.