وزیر اعظم عمران خان 4وزیر بدلنا چاہتے ہیں ،ہارون الرشیدنے حکومت اورفوج کے مابین بدلتے تعلقات کے حوالے سے بڑا دعویٰ کردیا

لاہور ( آن لائن) تجزیہ کار ہارون الرشید نے کہاہے کہ عمران خان چار وزیر بدلنا چاہتے ہیں اور فوج کے ساتھ اب تعلقات کی نوعیت وہ نہیں ہے ، یہ نوعیت بدل رہی ہے۔

دنیا نیوز کے پروگرام ”تھنک ٹینک“ میں گفتگو کرتے ہوئے ہارون الرشید نے کہا کہ آئی ایم ایف وہی کرے گا جو اس سے امریکہ کہے گا ،اس وقت امریکہ کوہماری ضرورت پڑ گئی ہے ،وہ افغانستا ن میں ہماری مدد چاہتاہے ، اس لئے تھوڑی سے نرمی ہوسکتی ہے لیکن ان سے مذاکرات کون کرے گا ؟ کیا اسد عمر کو مذاکرات کا ادراک ہے؟ ان کا کہنا تھا کہ ڈرائیور اورباورچی کوبھی دیکھ بھال کر رکھا جاتاہے ، اگر ڈرائیور کوگاڑی چلانا نہ آئے تو وہی کتنا بھی نیک اورخوش اخلاق ہوتو اس کا کیا فائدہ ہے ؟قوموں کے تعلقات باہمی نفع نقصان سے ہوتے ہیں ، اب دیکھنا ہوگا کہ ہم خود کیا کررہے ہیں؟ ایوب خان کے دور کے علاوہ کبھی ایسی ترقی نہیں ہوئی کہ ہم یاد رکھیں ۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان چار وزیر بدلنا چاہتے ہیں اور فوج کے ساتھ اب تعلقات کی نوعیت وہ نہیں ہے ، یہ نوعیت بدل رہی ہے ۔ ان کاکہناتھا کہ اب 18ترمیم واپس نہیں ہوسکتی ، دنیا میں کبھی ایسا نہیں ہوا کہ جب نیچے اختیارات منتقل ہوجائیں تو پھر وہ اوپرچلے جائیں ، اب یہ نہیں ہو سکتا ۔

اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں