- Advertisement -

خدمات واپس لیں، چیف سیکریٹری پنجاب کی وفاقی حکومت سے درخواست

- Advertisement -

پنجاب کے چیف سیکریٹری کامران علی افضل نے وفاقی حکومت کو خط ذریعے درخواست کی ہے کہ وہ ‘ذاتی وجوہات کی وجہ سے’ موجودہ عہدے پر فرائض انجام نہیں پائیں گے لہٰذا ان کی خدمات فوری طور پر واپس لی جائیں۔
چیف سیکریٹری پنجاب نے سیکریٹری اسٹبلشمنٹ ڈویژن انعام اللہ خان کے نام خط میں تفصیل سے آگاہ کیا۔
اس حوالے سے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے رہنما اور وزیراعلیٰ پنجاب کے مشیر عمر سرفراز چیمہ سے پریس کانفرنس میں سوال کیا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ اس معاملے پر پی ٹی آئی کا کوئی لینا دینا نہیں ہے۔
عمرسرفراز چیمہ نے کہا کہ ‘ان کا دورانیہ ڈھائی یا 3 مہینے کا تھا یا ہوسکتا ہے وہ ملک کر آگے بڑھنے نہیں پارہا تھا کیونکہ ان کی اپنی ترجیحات اور سروس کیریئر ہے’۔
خیال رہے کہ کامران علی افضل کو ستمبر 2021 میں تعینات کیا گیاتھا اور اس وقت وزیراعلیٰ پنجاب پی ٹی آئی کے عثمان بزدار تھے اور وہ پی ٹی آئی حکومت میں تعینات ہونے والے پانچویں چیف سیکریٹری تھے اور ان کا تعلق ڈسٹرکٹ منیجمنٹ گروپ کی 21 ویں کامن سے ہے۔
دوسری جانب وزیراعلیٰ پنجاب پرویز الہٰی نے چیف سیکریٹری کامران علی افضل اور پنجاب کے پولیس چیف راؤ سردار علی خان پر برہمی کا اظہار کیا تھا کہ انہوں نے پی ٹی آئی اراکین اسمبلی کے خلاف کارروائی کی اور رواں برس کے اوائل میں پنجاب اسمبلی میں پولیس فورس تعینات کردی تھی۔
اسی طرح چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے بھی عوامی اجتماعات میں چیف سیکریٹری اور سابق آئی جی کے ساتھ ساتھ کمشنرز اور ڈپٹی کمشنرز پر تنقید کرتے رہے ہیں۔
عمران خان نے خاص طور پر 25 مئی کو پی ٹی آئی کے لانگ مارچ کے دوران لاہور اور لیہ میں تعینات کیے گئے اہلکاروں کے حوالے سے شدید تنقید کی تھی۔
پی ٹی آئی رہنماؤں نے بھی افسران کو خبردار کیا تھا کہ وہ دوبارہ حکومت میں آکر ان کے خلاف قانونی اور محکمہ جاتی کارروائی شروع کریں گے۔
سابق وزیراعظم عمران خان نے ایک تقریر میں حکومت پنجاب کے دونوں اعلیٰ افسران کا نام لیا تھا اور ان پر مسلم لیگ(ن) کا ساتھ دینے کا الزام عائد کرتے ہوئے انہیں عبرت کا نشان بنانے کا اعلان کیا تھا۔
میڈیا رپورٹس کے مطابق آئی جی راؤ سردار علی کان اور کامران علی افضل نے حکومت سے درخواست کی تھی کہ انہیں پنجاب سے منتقل کردیا جائے اور انہیں خدشہ تھا کہ وزیراعلیٰ کے دوبارہ انتخاب کی روشنی میں صوبے کی حکومت تبدیل ہونے پر تادیبی کارروائی کی جائے گی۔