5 سالہ ریکارڈ ٹوٹ گیا ، عمران حکومت کی چند ماہ کی کارکردگی پر انگریزی جریدے اکانومسٹ کی خصوصی رپورٹ

لاہور ( ویب ڈیسک ) دی اکانومسٹ نے اکانومک انٹیلی جنس یونٹ کی جائزہ رپورٹ جاری کردی جس میں کہا گیا کہ پاکستان میں 2019 کے دوران مہنگائی میں اضافہ ہوا، روپے کی قدر میں کمی مہنگائی کی سب سے بڑی وجہ ہے اور مکانات کے کرایوں، پانی و بجلی گیس کے نرخوں

میں اضافے نے بھی مہنگائی بڑھانے میں اہم کردار ادا کیا۔دی اکانومسٹ کی رپورٹ کے مطابق ہاؤسنگ، پانی بجلی گیس کے نرخ میں سال بہ سال 11.6 فیصد اضافہ ہوا، غذائی اشیاء کی قیمتوں میں 4.5 فیصد اضافہ ہوا، فروری کے مہینے میں افراط زر کی شرح 56 ماہ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی جب کہ زرعی پیداوار میں کمی بھی کھانے پینے کی اشیاء کی قیمت میں اضافہ کا سبب بنے گی۔ عالمی جریدے دی اکانومسٹ کی اکانومک انٹیلیجنس جائزہ رپورٹ کے مطابق پاکستان میں 2019 کے دوران مہنگائی میں اضافہ ہوا،بجلی و گیس کے نرخ میں اضافہ اور روپے کی قدر میں کمی مہنگائی کے بڑے عوامل ہیں، زرعی پیداوار میں کمی بھی کھانے پینے کی اشیا کی قیمت میں اضافہ کا سبب بنے گی۔ تفصیلات کے مطابق دی اکانومسٹ نے اکانومک انٹیلی جنس یونٹ کی جائزہ رپورٹ جاری کردی جس میں کہا گیا کہ پاکستان میں 2019 کے دوران مہنگائی میں اضافہ ہوا، روپے کی قدر میں کمی مہنگائی کی سب سے بڑی وجہ ہے اور مکانات کے کرایوں، پانی و بجلی گیس کے نرخوں میں اضافے نے بھی مہنگائی بڑھانے میں اہم کردار ادا کیا۔دی اکانومسٹ کی رپورٹ کے مطابق ہاسنگ، پانی بجلی گیس کے نرخ میں سال بہ سال 11.6 فیصد اضافہ ہوا، غذائی اشیا کی قیمتوں میں 4.5 فیصد اضافہ ہوا، فروری کے مہینے میں افراط زر کی شرح 56 ماہ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی جب کہ زرعی پیداوار میں کمی بھی کھانے پینے کی اشیا کی قیمت میں اضافہ کا سبب بنے گی۔

اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں