نیب تحریک انصاف کے طاقتور وزیرکے سامنے ڈھیرہوگئی

اسلام آباد ( آن لائن) ایک عرصے سے تحریک انصاف کے وزیر خسروبختیار کے معاملات خبروں میں ہیں اور نیب بھی اس کی تحقیقات کررہاتھا لیکن اب مزید کارروائی روک دی گئی جس کی دستاویزات بھی سینئر تحقیقاتی صحافی عمر چیمہ سامنے لے آئے ہیں ۔

مائیکروبلاگنگ ویب سائٹ ٹوئٹرپر دستاویزات شیئرکرتے ہوئے لکھا کہ ’خسرو بختیار کیخلاف نیب کی وہ انکوائری جس پر مزید کارروائی روک دی گئی ہے ‘۔ ساتھ ہی انہوں نے نوٹ میں لکھ کر بتایا کہ ’ان اسناد کو اپنی ذمہ داری پر شئیر کر رہا ہوں چیلنج کرنے کی صورت میں مزید ثبوت آ سکتے ہیں‘۔پہلی ٹوئیٹ میں خسروفیملی کا شجرہ نصب اور2006کے بعد ان کے مال وزر میں اضافے ، مختلف کاروبار شروع ہونے اور نامعلوم ذرائع سے آنیوالی رقم پر روشنی ڈالی گئی ۔

اپنی اگلی ٹوئیٹ میں عمر چیمہ نے سوال اٹھاتے ہوئے لکھا کہ ”اگر نیب ان دستاویزات کی تردید کرے تو ہم فائل کا ریفرنس دے سکتے ہیں اسکے بعد نیب چئیرمین کا استعفیٰ آئے گا؟“اس ٹوئیٹ میں صحافی نے ریونیوڈیپارٹمنٹ اور بیرون ملک کی رقوم سے متعلق فیڈرل بورڈ آف ریونیو کے اعدادوشمار شیئرکیے گئے ہیں۔

اسی طرح تیسری ٹوئیٹ میں لکھا کہ ”پی ٹی آئی حکومت کا جو اہلکار ان دستاویزات کی تردید کرے وہ ساتھ وعدہ کرے کہ اگر یہ ثابت ہوگیا کہ یہ نیب کی دستاویزات ہے تو وہ استعفی دے گا‘۔تیسری ٹوئیٹ میں شیئرکی گئی دستاویزات کے مطابق نیب اس نتیجے پر پہنچی کہ 2004 ءمیں سیاست میں آنے سے قبل خاندان کے پاس رحیم یار خان میں موجود زمین ہی روزی روٹی کاواحد ذریعہ تھی لیکن 2004ءمیں کابینہ میں پہنچتے ہی فیملی کے100سے زائد بیرون ملک دوروں اور دیگراخراجات کے علاوہ اثاثوں میں اچانک اضافہ ہوگیا۔جوائنٹ فیملی سسٹم میں رہنے والی فیملی کی زرعی زمین بھی ایک مختصر عرصے کے دوران دوہزار سے زائد کنال کا اضافہ ہوگیا جبکہ مختلف شہروں میں گھروں سمیت پانچ چھ پلاٹس بھی حاصل کرلیے گئے جبکہ 2011سے 18کے دوران بیرون ملک سے تقریباً797ملین رقم بھی وصول ہوئی جبکہ ایف بی آر کے ریکارڈ میں بھی فیملی کے اثاثوں میں مسلسل اضافہ دیکھاگیااور اب تقریباً100بلین کے اثاثوں کے مالک ہیں۔

اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں