پنجاب پولیس کا ڈرامہ بے نقاب جان و مال و عزت کے لٹیرے گرفتار کرنے پر انسپکٹر ضلع بدر کانسٹیبل کو شہید کرنے والے ڈاکو کس کے ڈیرے سے گرفتار ہوئے؟ انتہائی ایماندار پولیس افسر نے ایسا کام کیا کہ شہری سڑکوں پر آگئے

لاہور(رپورٹ:اسدمرزا) پنجاب پولیس کے انتہائی ایماندار پولیس افسر نے شیخوپورہ میں کانسٹیبل کو شہید اور ڈکیتی مزاحمت پر قادر باری ایڈووکیٹ کو قتل کرنے والے ڈاکو گرفتار کرنے پر ایس ایچ اوشرقپور انسپکٹر عبداللہ پاشا کو شیخوپورہ رینج سے گوجرانوالہ رینج تبادلہ کر دیا۔پی ٹی آئی کے رہنما علی اصغر منڈا اور انکے حماتیوں نے جہاں جشن منائے وہاں شرقپور کے لوگوں نے بہادر ایس ایچ او کا تبادلہ منسوخ کرنے کے لئے احتجاج کرتے ہوئے پولیس افسران کے خلاف زبردست احتجاج کیا۔ بتایا گیا ہے کہ کچھ عرصہ قبل ڈاکوں نے پولیس اہلکار ظہیر کو شہید کر دیا اور فرار ہو گئے اسی طرح شرقپور روڈ پر ڈاکوں ناکہ پر ایڈووکیٹ قادر باری کو روکنے کی کوشش کی نہ رکنے پر اس پر فائرنگ کر کے ہلاک کر دیا۔

بتایا گیا ہے کہ پنجاب کی ایک اہم شخصیت نے دوست کے بیٹے کے قتل پر افسوس کرنے انکے گھر بھی گئے جہاں پولیس کو ملزموں کی گرفتاری کا حکم دیا۔ بتا یاگیاہے کہ ایس ایچ اوشرقپور انسپکٹر عبداللہ پاشا نے ڈاکوں کے گینگ کو ٹریس کر لیا تو پولیس کو اطلاع ملی کی ڈاکو علی اصغر منڈا کے دست راست عارف کچے کے ڈیرے پر موجود ہیں پولیس نے چھاپہ مارا تو وہاں مقابلہ ہو گیا جہاں ایک ڈاکو نواز ساتھیوں پرویز اور غضنفر کی فائرنگ سے ہلاک ہو گیا پولیس نے مقابلے کے بعددونوں ڈاکوں کو گرفتار کر لیا۔ بتایا گیا ہے کہ علی اصغر منڈا نے ایس یچ او کو دھمکی دی کہ اس نے عارف کچے کے ڈیرے نہیں بلکہ اس کے گھر چھاپہ مارا ہے۔بتایا گیا ہے کہ علی اصغر منڈا سابق ایم پی اے گل آغا کی وساطت سے ایڈیشنل آئی جی اسٹیبلیشمنٹ کو تبادلے کے آخری روز جا کر ملے اور پھر ایس ایچ اوشرقپور انسپکٹر عبداللہ پاشاکو گوجرنوالہ رینج میں تبادلے کے آڈر کر واکے واپس آئے۔جس پر شرقپور شریف کے شہریوں نے پولیس افسران کے خلاف احتجاج کیا کہ انکی عزتیں اور گھر بار لوٹنے والے ڈاکوں کو گرفتار کرنے والے انسپکٹر کو تبدیل کر کے انہیں پھر سے غیر محفوظ کر دیا گیا ہے۔

اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں