چین نے پاکستان کو دنیا میں اپنا واحد مستقل اور بااعتماد دوست قرار دے دیا

اسلام آباد( این این آئی) چینی سفیر یائو جنگ نے کہا ہے کہ چین کا دنیا میں اگر کوئی مستقل اور بااعتماد دوست ہے تو پاکستان نمبر ون ہے،چین پاکستان کے مابین تعلقات کی بنیاد باہمی انڈرسٹینڈنگ ہی ہے، چین پاکستان اقتصادی راہداری دوستی کا صرف ایک عکس ہے،چین ابھررہا ہے لیکن چین دنیا میں امن کے ساتھ آگے بڑھ رہا ہے، چین ترقی کررہا ہے چین چاہتا ہے کہ دنیا کے دیگر ممالک بھی ترقی کریں۔

پیر کواسلام آباد میںکتاب کی تقریب رونمائی سے خطاب کرتے ہوئے چینی سفیر نے کہا کہ چین دنیا کی ترقی میں کنٹریبیوٹ (حصہ ڈال رہا ہی)کررہا ہے کیونکہ ہمارے پاس وسائل ہیں ہم نے اصلاحات کے زریعے ملک کو ترقی کی راہ پر ڈالا ہے۔ یائو جنگ نے کہاہے چین میں گورننس کے چار ستون ہیں جن میں ریفارمز، ماڈرنائزیشن ،قانون کی حکمرانی اور از خود بہتری لانا ہے۔
انہوں نے کہا کہ سی پیک چین کی خارجہ معاشی پالیسی کا حصہ ہے،سی پیک کے تحت پاکستان میں انسانی ترقی پر توجہ مرکوزہے، یہ منصوبہ دونوں ملکوں کے مابین تعلقات کا ایک تاریخی منصوبہ ہے۔ انہوں نے کہاکہ مستقبل میں تمام شعبوں میں تعاون کو فروغ دیا جائے گا،ہمارے تعلقات کا اہم نکتہ باہمی مفادات کا فروغ ہے،اس کتاب کو پڑھنے کے بعد یہ لگا کہ مصنف کو چین بارے مجھ سے زیادہ معلومات ہیں۔

چیئرمین سینیٹ خارجہ کمیٹی سینیٹر مشاہد حسین سید نے کہا کہ پاکستان اور چین دونوںکے مابین تعلقات اور دوستی ٹائم ٹسٹٹ ہیں،چین کے صدر شی جن پنگ نے پاکستان اور چین کو آئرن برادر زقرار دیا تھا، شی جن پنگ کا روڈ اینڈ بیلٹ پرا جیکٹ اب ایک ویژن بن چکا ہے، سی پیک منصوبہ سے اب پاکستان اقتصادی حب بننے جارہا ہے۔ مشاہد حسین سید نے کہا کہ سی پیک نے تمام شعبوں میں روزگار اور ملازمت کے مواقع پیداکئے ہیں،سی پیک کے تحت چین سوشل سیکٹر کے ستائیس منصوبوں پر ایک ارب ڈالر خرچ کئے جائیں گے،اکیسویںسنچری اب ایشیاء کی سنچری ہے۔
انہوں نے کہا کہ پاکستان امریکہ کی جانب سے چین پر ٹیرف پابندیوں کو مسترد کرتا ہے، امریکی اقدامات ڈبلیو ٹی او کے سپرٹ کی خلاف ورزی ہے،موجودہ دور فائیو جی ٹیکنالوجی ہے، ہم سی پیک کے تحت خطے میں روابط، امن و امان کو فروغ دینا چاہتے ہیں۔صدر آزاد کشمیر سردار مسعود خان نے کہا کہ روڈ اینڈ بلیٹ 1ٹریلین ڈالر کا منصوبہ ہے ،منصوبے سے ستر سے زائد ممالک م مستفیدہونگے ،کرپشن کے خاتمے کیلئے چین نے عملی اقدامات کیے ، چین 2030 کے ایجنڈے کی تکمیل کیلئے ترقی یافتہ ممالک کی مدد کرتاہے۔

اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں