جج ارشد ملک کی ویڈیو بنانے والا مزکزی ملزم میاں طارق گرفتار۔۔ ملزم سے کتنے سیاستدانوں کی ویڈیو برآمد ہو گئیں؟ تہلکہ خیز انکشاف

لاہور (ویب ڈیسک) : جج ارشد ملک کی ویڈیو بنانے والے مرکزی ملزم میاں طارق کو گرفتار کر لیا گیا ہے،اس حوالے سے میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ جج ارشد ملک بلیک میلنگ ویڈیو بنانے والے مرکزی ملزم میاں طارق کو حراست میں لے لیا گیا ہے۔ میاں طارق کو ایف آئی اے سائبر ونگ نے گرفتار کیا ہے۔میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ میاں طارق دوبئی فرار ہونے کی کوشش کر رہے تھے۔

میاں طارق سے ویڈیو برآمد کر کے فرانزک بھی کروا لیا گیا ہے۔میاں طارق کا دو روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کر لیا گیا ہے۔میاں طارق کو دو روز کے لیے ایف آئی اے کے حوالے کر دیا گیا ہے۔ خیال رہے احتساب عدالت کے جج ارشد ملک کے خلاف مبینہ ویڈیو اسکینڈل کا بلیک میلر میاں طارق ایف بی آر کا بھی نادہندہ نکلا تھا۔
احتساب عدالت کے جج ارشد ملک کے مبینہ ویڈیو اسکینڈل کے مرکزی کردار کے انٹرنیشنل بلیک میلر ہونے کا انکشاف ہوا تھا۔

قومی اخبار میں شائع رپورٹ میں بتایا گیا کہ ذرائع کے مطابق میاں طارق سےسینکڑوں کی تعداد میں ویڈیوز ملی ہیں جن میں 15 سیاستدانوں کی ویڈیوز بھی شامل ہے اور کئی سرکاری افسران بھی ویڈیوز کی وجہ سے اس کے ہاتھوں بلیک میل ہوتے رہے ہیں۔ ذرائع کے مطابق بااثر شخصیات کا ہاتھ پیچھے ہونے کی وجہ سے کئی ویڈیوز تو سرکاری گیسٹ ہاؤس اور رہائش گاہوں کے اندر بھی بنائی گئیں اور ایک وقت میں یہ پنجابکے ایک بڑے سرکاری دفتر میں اس طرح جاتا تھا جیسے یہ وہاں پر سب کچھ ہو ۔
ذرائع نے اس بات کا انکشاف کیا کہ میاں طارق کے ساتھ اور بھی کچھ لوگ ایسے شامل ہیں جو پیشے کے لحاظ سے انتہائی معتبر مگر وہ بھی اس گھناؤنے کام میں مکمل طور پر ملوث ہیں ۔ ذرائع کے مطابق کئی پارٹیوں میں تو کئی سٹیج، فلم کی اداکارائیں اور نامور ماڈلز کو بھی بلایا جاتا تھا اور ان کی طرف سے بلائی گئی پارٹیوں میں ایسی ایسی معروف شخصیات ہوتی تھیں جن کے متعلق ایسا ہونے کا گمان بھی نہیں کیا جا سکتا ۔

ذرائع نے بتایا کہ میاں طارق کو مختلف لوگ مشکل ترین کاموں کے لیے بھاری رقوم دیتے تھے اور یہ ان رقوم کے عوض کام بھی کرواتا تھا اور بلیک میلنگ بھی کرتا تھا۔ ذرائع کے مطابق اس ضمن میں نہ صرف اہم شواہد اور ویڈیوز اہم ادارے نے حاصل کر لی ہیں بلکہ اس کے کئی اور کردار بھی سامنے آ چکے ہیں۔مریم نواز کی پریس کانفرنس سے پہلے اور فوری بعد ناصر بٹ اور پیپلزپارٹی کے ایک اہم رہنما نے بھرپور کوشش کی کہ میاں طارق پاکستان سے چلا جائے اور اس کے لیے اسے کافی پیشکشیں بھی کی گئیں اور ایک بڑے تگڑے شخص کی ڈیوٹی بھی لگائی گئی کہ وہ اسے لے جائے اور جب تک ہمارے مقاصد پورے نہیں ہوتے ، اس وقت تک اسے منظر سے سائیڈ پر ہی رکھا جائے ۔

ذرائع کے مطابق اسی وجہ سے ایک منصوبہ بندی کے تحت مریم نواز نے پریس کانفرنس میں جج ارشد ملک کی ویڈیو کے حوالے سے ایک اہم ترین قومی ادارے کا نام لیے بغیر اس کی طرف اشارہ کر کے بلیک میل اور بدنام کرنے کی کوشش کی ۔ ذرائع کا کہنا تھا کہ ن لیگ کی یہ منصوبہ بندی تھی کہ جج ارشد ملککی مبینہ ویڈیو کے ذریعے عوامی ہمدردیاں اور نوازشریف کے لیے ریلیف حاصل کریں اور نوازشریف کو ریلیف ملنے پر علاج کے بہانے انہیں پاکستان سے باہر لے جائیں اور اس کے بعد اگر کوئی چیز سامنے بھی آتی ہے تو اس وقت نوازشریف کے باہر ہونے سے مسئلہ نہیں ہو گا ۔

اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں