آم شوق سے کھائیں مگر اس سے پہلے۔۔۔ حامد میر نے آم خریدنے والے شہریوں کو خبردار کردیا

اسلام آباد (ویب ڈیسک) : آم کو پھلوں کا بادشاہ کہا جاتا ہے۔ موسم گرما کے آتے ہی آم کا انتظار شروع ہو جاتا ہے اور شہری زیادہ سے زیادہ آم خریدتے اور اس سے میٹھے ذائقے سے لطف اندوز ہوتے ہیں ، یہی نہیں بلکہ عام پھلوں کے مقابلے میں آم بچوں میں بھی سب سے زیادہ مقبول ہے لیکن آم خریدنے والوں کو معروف صحافی حامد میر نے خبردار کر دیا۔
مائیکروبلاگنگ ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنے پیغام میں حامد میر کا کہنا تھا کہ ہوشیار خبردار ؛ آم ضرور کھائیے لیکن خریدنے سے پہلے یہ دیکھ لیں کہ آپ بازار سے جو آم خرید رہے ہیں وہ کیلشیم کاربائیڈ سے تو نہیں پکائے گئے؟ انہوں نے کہا کہ اگر ان آموں کو اس زہریلے مواد سے پکایا گیا ہے تو پھر آپ کینسر خرید رہے ہیں جبکہ فوڈ اتھارٹی نے بھی اس کیمیکل کےاستعمال پر پابندی عائد کر دی ہے۔معروف صحافی حامد میر نے اپنے ٹویٹ میں ایک ویڈیو بھی شئیر کی۔

دراصل کیلشیم کاربائیڈ آم کو کم وقت میں پکانے کے کام آتا ہے ، زیادہ منافع کمانے کے چکر میں دکانداروں نے کم وقت میں آم پکانے کا یہ طریقہ اپنا لیا ہے جو شہریوں کی زندگیاں خطرے میں ڈال رہا ہے۔ حامد میر کے اس ٹویٹ پر کئی شہریوں نے تشویش کا اظہار کیا اور کہا کہ پھل فروش اس قدر ہماری زندگیوں کے ساتھ کھیل رہے ہیں اس کا ہمیں قطعی طور پر اندازہ نہیں تھا۔
دودھ سمیت دیگر اشیائے خوردونوش میں ملاوٹ کے ساتھ ساتھ اب پھل فروشوں نے بھی شہریوں کی زندگیوں کے ساتھ کھیلنا شروع کر دیا ہے جو کہ انتہائی افسوسناک ہے۔شہریوں نے پنجاب فوڈ اتھارٹی سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ فروٹ منڈیوں میں چھاپے مار کر ایسے پھل فروشوں کے خلاف سخت کارروائی کریں ۔

اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں