وزیراعظم عمران خان ’مین آف دی ایئر‘ قرار

اردن کے تھنک ٹینک نے پاکستان کے وزیراعظم عمران خان کو ’مین آف دی ایئر‘ قرار دیا ہے۔

اردن کے رائل انسٹیٹیوٹ آف اسٹریٹجک اسٹڈیزنے 500 با اثرمسلمانوں کی فہرست جاری کر دی ہے۔ فہرست کے مطابق نامور پاکستانی عالم دین مفتی تقی عثمانی پہلے اور وزیراعظم عمران خان دنیا کے 16ویں بااثر مسلمان ہیں۔

رائل انسٹیٹیوٹ آف اسٹریٹجک اسٹڈیز لندن نے عمران خان کو ’مین آف دی ایئر‘ بھی قرار دیا ہے جب کہ فلسطینی نژاد امریکی خاتون سیاستدان اور کانگریس کی رکن راشدہ طالب کو ’ویمن آف دی ایئر‘ قرار دیا گیا ہے۔

ادراے کی جانب سے پاکستان کو 1992 کا ورلڈ کپ جتوانے میں عمران خان کے قائدانہ کردار، شوکت خانم اسپتال کے قیام ،سیاست میں ان کی 22 سالہ جدوجہد ، وزیراعظم کی حیثیت سے مسئلہ کشمیر، اسلامو فوبیا اور امن کیلئے ان کی جدوجہد اور اقوام متحدہ میں ان کی حالیہ تقریر کو سراہا گیا ہے۔

’دا مسلم 500 ‘کے مدیر کا کہنا ہے کہ اگر یہ فہرست 1992 میں بھی شائع ہوتی تو میں پہلے نمبر پر پاکستانی وزیر اعظم عمران خان کا نام تجویز کرتا۔

500 بااثر مسلمان شخصیات میں مفتی تقی عثمانی سرفہرست
بااثر مسلم افراد کی فہرست میں پاکستان کے نامور عالم دین مفتی تقی عثمانی کو پہلا نمبر دیا گیا ہے۔

دنیا کی دوسری بااثر مسلمان شخصیت ایران کے رہبر اعلیٰ آیت اللہ خامنہ ای کو قرار دیا گیا ہے۔

ابو ظہبی کے ولی عہد شیخ محمد بن زاید النہیان کو بااثر مسلم شخصیات کی فہرست میں تیسرے نمبر پر رکھا گیا ہے۔

ان کے علاوہ فہرست میں سعودی عرب کے حکمران شاہ سلمان بن عبدالعزیز چوتھے، اردن کے شاہ عبداللہ دوئم پانچویں، ترک صدر رجب طیب اردوان چھٹے نمبر پر ہیں۔

وزیراعظم عمران خان اس فہرست میں 16 ویں ، سعودی عرب کے ولی عہد محمد بن سلمان 24 ویں اور پاکستانی عالم دین اور مبلغ مولانا طارق جمیل 36 ویں نمبر پر موجود ہیں۔

ملائیشیا کے وزیراعظم مہاتیر محمد 42 ویں، معروف مصری فٹ بالر محمد صلاح 44 ویں اور تبلیغی جماعت پاکستان کے امیر مولانا نذر الرحمان بااثر مسلم شخصیات کی فہرست میں 50 ویں نمبر پر ہیں۔

اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں