خیبر پختونخوا حکومت کی نانبائیوں کو بڑی پیشکش، ہڑتال تاحال جاری

خیبر پختونخوا حکومت نے ناراض ہونے والے نانبائیوں کو بڑی پیشکش کر دی ہے۔

صوبائی وزیر اطلاعات شوکت یوسفزئی نے نانبائیوں کو بڑی پیشکش کرتے ہوئے کہا ہے کہ جو آٹا نان بائیوں کو 4500 میں مل رہا ہے 3800 روپے میں دینے کو تیار ہیں۔ شوکت یوسفزئی نے کہا ہے کہ نانبا ئیوں سے ایک سے زائد بار مذاکرات ہوچکے ہیں۔

ہم نے بڑی پیشکش بھی کردی تاہم وہ روٹی کی قیمت بڑھانے پر باضد ہیں۔ ان کا کہنا تھا پنجاب سے آنے والے آٹے میں دو دن وقفہ آنے سے مسائل پیدا ہوئے۔ تاہم نانبائی ایسوسی ایشن کے عہدیدار قیمت بڑھانے باضد ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ نانبائی ایسوسی ایشن کے عہدیدار خود ہی ڈیلرز کو منتخب کر لیں ۔ فلورملز ایسوسی ایشن ان ڈیلرز سے خود ہی سستا آٹا خرید لے۔

واضح رہے اس سے قبل وزیر اطلاعات خیبر پختونخواہ شوکت یوسفزئی نے کہا کہ سندھ میں گندم کا بحران صوبائی حکومت کی نالائقی ہے، کراچی روشنیوں کا شہر نہیں رہا، کچرے کے انبار لگے ہوئے ہیں۔سندھ کے عوام کو دھوکا دیا جا رہا ہے۔

کراچی میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے شوکت یوسفزئی نے کا کہنا تھا کہ ملک میں گندم اور آٹے کا بحران نہیں، صرف مافیا سرگرم تھا اس کو روکا ہے۔

انہوں نے کہا کہ مہنگائی اور مشکلات ہیں گھبرانا نہیں ہے۔ کراچی روشنییوں کا شہر نہیں رہا، کچرے کے انبار لگے ہوئے ہیں۔ سندھ کے عوام کو دھوکا دیا جا رہا ہے۔

سندھ حکومت اپنا بجٹ کہاں استعمال کر رہی ہے؟ مسلم لیگ ن کی قیادت پر تنقید کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کی فکر ہے تو یہاں آئیں باہر جا کر باتیں نہ کریں۔ شوکت یوسفزئی کا کہنا تھا کہ وزیر اعظم نے دنیا کو بتایا بھارت کشیدگی پیدا کر رہا ہے، پاکستان امن چاہتا ہے کسی کی جنگ میں حصہ نہیں لے گا۔

اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں
تبصرے
Loading...