حالیہ تاریخ میں ترک فوج کا سب سے بڑا حملہ، طیاروں کی خوفناک بمباری

ادلب(ویب ڈیسک) ترک فوج و فضائیہ کے ادلب میں بھرپور جوابی حملے، 300 سے زائد شامی فوجی ہلاک، ترک کی افواج کی کاروائیوں میں شامی فوج کی متعدد بکتر بند گاڑیاں، ٹینک اور دیگر ساز و سامان بھی تباہ کر دیا گیا۔ غیر ملکی خبر رساں اداروں کی جانب سے فراہم کردہ تفصیلات کے مطابق ترکی نے بھرپور قوت سے بشارالاسد کی فوج پر حملہ کیا ہے۔

یہ حملہ ادلب میں کیا گیا۔ اس کاروائی میں ترک کی بری اور فضائی فوج نے شرکت کی۔ ترک فضائیہ کے طیاروں نے ادلب میں بشارالاسد کی فوج کی ٹھکانوں کو چن چن کے نشانہ بنایا۔ غیر ملکی خبر رساں اداروں کے مطابق ترک فوج کی اس کاروائی میں بشارالاسد کے 300 سے زائد فوجی ہلاک ہوئے ہیں، جبکہ شامی فوج کی متعدد بکتر بند گاڑیاں، ٹینک اور دیگر ساز و سامان بھی تباہ کر دیا گیا۔

اس سے قبل بتایا گیا تھا کہ شام کے شمال مغربی صوبہ ادلب میں صدر بشارالاسد کی وفادار فوج کے خلاف لڑائی میں 34 ترک فوجی ہلاک ہوگئے ۔ ترک فوج کو ادلب کے محاذ پر اب تک پہنچنے والا یہ سب سے بڑا جانی نقصان ہے۔ ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے ایک نشری تقریر میں ان فوجیوں کی ہلاکتوں کی اطلاع دی ۔ انھوں نے کہاکہ ہمارے 34 جوان شہید ہوئے ہیں، اللہ انھیں جوار رحمت میں جگہ دے لیکن دوسری جانب شامی نظام کا بھی بھاری جانی نقصان ہوا ہے۔

اس کے ساتھ ہی صدر ایردوآن نے ہنگامی حالت نافذ کرنے کے ساتھ ساتھ ادلب میں ہونے والی ہلاکتوں کے بعد آئندہ کا لائحہ طے کرنے کے لیے اعلیٰ فوجی اور سول حکام کا ہنگامی اجلاس طلب کیا۔ مزید بتایا گیا ہے کہ ادلب میں شامی فوج کے خلاف لڑائی میں اس ماہ کے دوران میں اب تک اکیس ترک فوجی مارے جا چکے ہیں۔ شامی فوج اپنے اتحادی روس کی فضائیہ کی مدد سے ادلب پر دوبارہ کنٹرول کے لیے فیصلہ کن لڑائی لڑرہی ہے اور اس نے گذشتہ چند ہفتوں کے دوران میں اس صوبے میں متعدد قصبوں اور دیہات پر دوبارہ کنٹرول حاصل کیا ہے۔ تاہم اب ترک فوج کی کاروائی میں شامی فوج کو بھاری جانی و مالی نقصان برداشت کرنا پڑا ہے۔

اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں
تبصرے
Loading...