آدمی نے اپنے جڑواں بچوں کا ڈی این اے ٹیسٹ کروایا؟ نتیجہ آیا تو ڈاکٹر بھی دنگ رہ گئے، میڈیکل سائنس کی تاریخ کا انوکھا واقعہ بن گیا

بیجنگ(مانیٹرنگ ڈیسک) چین میں ایک آدمی کے جڑواں بچے پیدا ہوئے جن کی پیدائش کی رجسٹریشن کروانے کے لیے اس نے دونوں کے ڈی این اے ٹیسٹ کروائے جن کے نتائج ایسے حیران کن آئے کہ سن کر یقین کرنا مشکل ہو جائے۔ میل آن لائن کے مطابق چین میں بچوں کی پیدائش رجسٹرڈ کروانے کا یہ طریقہ ہے کہ پہلے بچوں کا ڈی این اے ٹیسٹ کیا جاتا ہے چنانچہ ان جڑواں بچوں کا بھی کیا گیا جس کے نتائج میں یہ انکشاف ہوا کہ یہ جڑواں بچے ایک باپ کے نہیں تھے۔ ان دونوں بچوں کے باپ الگ الگ تھے۔

بچوں کے ڈی این اے کرنے والے پریکٹیشنر ڈینگ یاجون کا کہنا تھا کہ ”یہ میڈیکل سائنس کی تاریخ کا انوکھا واقعہ ہے اور ایسا صرف 1کروڑ جڑواں بچوں میں سے کسی ایک جوڑے میں ہوتا ہے جس کا صاف مطلب یہ ہے کہ ایسا ہونا ناممکن ہے۔ “ ڈاکٹر ڈینگ یاجون، جو بیجنگ ژونگ ژینگ فرانزک آئیڈنٹی فکیشن سنٹر کے ڈائریکٹر بھی ہیں، کا کہنا تھا کہ ”ایسا ہونے کے لیے پہلے تو خاتون کو ایک ماہ میں دو بیضے پیدا کرنے ہوتے ہیں اور پھر انتہائی مختصر وقت میں دو مردوں سے ملاپ ہو۔ ایک مرد کے سپرمز کا ایک بیضے اور دوسرے مرد کے سپرمز کا دوسرے بیضے سے ملاپ ہو تو دو مختلف مردوں کے ایک خاتون کے ہاں جڑواں بچے پیدا ہو سکتے ہیں لیکن ایسا ہونا لگ بھگ ناممکن ہے۔ “ یہ واقعہ ڈاکٹر ڈینگ نے میڈیا کے ساتھ شیئر کیا ہے تاہم انہوں نے ان جڑواں بچوں کے ماں باپ کی شناخت مخفی رکھی۔ یہ بھی معلوم نہیں ہو سکا کہ بیوی کی بے وفائی کی تصدیق ہونے پر ان کے ازدواجی تعلق پر اس کا کیا اثر پڑا۔

اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں
تبصرے
Loading...