بہت برا وقت آرہا ہے ، اگر ہماری باتوں پر عمل نہ کیا گیا تو کیا ہو سکتا ہے؟ ماہرین نے وارننگ جاری کردی

پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن کے مرکزی رہنما ڈاکٹر اشرف نظامی نے کہا ہے کہ بالکل سخت لاک ڈاؤن کی ضرورت ہے تاہم یہ اقدام پہلے ہی اٹھا لیا جاتا تو بہتر ہوتا، مگر افسوس کی بات ہے کہ ہمارے بار بار توجہ دلاؤ نوٹس کے باوجود حکومت نے اس طرف کوئی توجہ ہی نہ دی۔
کورونا سے ملک میں جو تباہی ہوناتھی وہ ہوچکی۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ ہم ڈاکٹرز حضرات تو چھوٹی عید پر بھی حکومت سے منت سماجت کرتے رہے کہ خدارا لاک ڈاؤن کو سخت کریں۔ کورونا ایس او پیز پر عملدرآمد کو یقینی بنائیں مگر حکومت نے ہماری ایک نہ سنی اور اس کے بعد جو کچھ ہوا، وہ آپ کے سامنے ہے۔
اگر اب بھی عید کے موقع پر عوام نے احتیاط سے کام نہ لیا تو پھر اس کے خطرناک اثرا ت مرتب ہوں گے۔
دوسری جانب ایک اور خبر کے مطابق پاکستان پیپلز پارٹی کی مرکزی رہنما نفیسہ شاہ نے کہا ہے کہ پی ٹی آئی کی حکومت نے تو کورونا وباء کو مذاق بنا کررکھ دیا ہے۔ جس غیر سنجیدگی کیساتھ یہ باقی حکومتی امور چلا رہے ہیں۔ ٹھیک اسی طرح سے انہوں نے کورونا وباء کے ایشو پر بھی غیر ذمہ داری کا مظاہرہ کیا ہے۔
کبھی یہ کہتے ہیں کورونا ہے ہی نہیں، کبھی کہتے ہیں لاک ڈاؤن کی بھی ضرورت نہیں اور پھر کبھی خود ہی سمارٹ لاک داؤن کی بات کرتے ہیں۔
ان کا کہنا تھا چونکہ حکومت خود اس ایشو کو لیکر سنجیدگی کا مظاہرہ نہیں کررہی تو عوام کیسے اس ایشو پر سنجیدہ ہو سکتے ہیں۔ اگر ایک مرتبہ ہی سخت لاک داؤن کر لیا جاتا تو آج ہم اس پرمکمل قابو پاچکے ہوتے۔ 
اس حوالے سے حکومت پنجاب کے مشیر ڈاکٹر سلمان شاہ نے کہا ہے کہ سمارٹ لاک داؤن کے مثبت نتائج آئے۔ وزیر اعظم کی اس پالیسی کو پوری دنیا نے سراہا، اب عید کے موقع پر بھی کورونا وائرس کا پھیلاؤ روکنے کیلئے سخت لاک ڈاؤن ضروری ہے۔
اسلئے حکومت نے عید کے موقع پر عوام دوستی کا عملی ثبوت فراہم کرتے ہوئے لاک ڈاؤن کا فیصلہ کیا۔
انہوں نے کہا عوام سمیت ڈاکٹرز اپوزیشن اور دیگر حلقوں سے عید لاک ڈاؤن کیساتھ منانے کا مطالبہ کیا گیا تھا اور یہی عوام کے حق میں تھا۔
اسلئے عید کے موقع پر لاک ڈاؤن کیا جارہا ہے، عوام سے درخواست ہے وہ اپنی اور اپنے پیاروں کی زندگیاں محفوظ کرنے کیلئے کورونا ایس او پیز پر مکمل عمل کریں۔

اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں
تبصرے
Loading...